Templates by BIGtheme NET

حضرت عمر فاروق رضاللہ عنہ اور ایک بدو کی کہانی

آپ حضرات نے عدلِ فاروقی کے بارے میں تو سنا ھو گا مگر شاید صبرِ فاروقی کے بارے میں نہیں سنا ،، حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے بارے میں عام تأثر یہی ھے کہ آپؓ بہت سخت طبیعت کے مالک تھے ،، مگر حقیقت یہ ھے کہ آپ نہایت رقت آمیز طبیعت کے مالک تھے ، آپ کی سختی اصول پر مبنی ھوتی تھی اور وہ ایک ایڈمنسٹریٹر کے لئے بہت ضروری بھی تھی ،،،، ایک بدو صبح صبح امیر المومنین عمرابن الخطابؓ کے گھر اپنی بیوی کی زبان درازی کی شکایت کرنے آیا ،، آپ ایک گھر میں رھتے تھے کوئی 100 کنال کا م مزید جاننے کے لیے نیچے ویڈیو پر کلک کریں


بدو جونہی دروازے کے پاس پہنچا ، اس نے جناب فاروق رضی اللہ عنہ کی بیوی کو بولتے سنا وہ خوب کلاس لے رھی تھی اور آگے سے جناب فاروقؓ کی آواز تک نہیں آ رھی تھی ،، اگر عمر ابن الخطابؓ کا یہ حال ھے جو اتنے سخت ھیں اور امیر المومنین بھی ھیں تو میرا شمار تو کسی شمار میں نہیں ھے ، پھر شکایت کا فائدہ؟ ادھر بدو واپسی کے لئے پلٹا ادھر امیرالمومنین سیچوئیشن کو ٹھنڈا کرنے کے لئے گھر سے باھر نکل آئے ،، آپؓ نے بدو کو واپس جاتے دیکھا اور اس کی چال ڈھال سے سمجھ لیا کہ یہ مدینے کا باسی نہیں کوئی مسافر ھے آپ نے اس کو آواز دی کہ بھائی کسی کام سے آئے تھے ؟ وہ واپس پلٹا اور کہا کہ امیرالمومنین میں اپنی بیوی کی شکایت لے کر آیا تھا کہ وہ مجھے بہت ڈانٹتی ھے مگر آپ کو بھی اسی مصیبت میں مبتلا دیکھ کر واپس جا رھا تھا کہ جب امیرالمومنین کا خود اپنا یہ حال ھے تو پھر ھمارے لئے بھی صبر کے سوا چارہ نہیں امیر المومنین عمر فاروقؓ نے اسے نصیحت کی ،فرمایا میرے بھائی اس کی یہ ساری باتیں میں اس کے ان احسانات کے بدلے برداشت کرتا ھوں جو وہ مجھ پر کرتی ھے ،، وہ میرا کھانا تیار کرتی ھے میری روٹی پکاتی ھے ،میرے کپڑے دھوتی ھے ، میری اولاد کو دودھ پلاتی ھے اور میرے دین کی حفاظت کرتی ھے اور مجھے حرام سے بچاتی ھے اور یہ سب اس پر واجب بھی نہیں ھے ، ، اس شخص نے کہا کہ امیر المومنین میری بیوی بھی یہ سب کام کرتی ھے ، آپ نے فرمایا تو پھر اس کو برداشت کرو بھائی ،، فانھا مدۃ یسیرہ ،، یہ تھوڑی سی مدت ھی کی تو بات ھے ،،