Templates by BIGtheme NET

بے اولاد جوڑوں کے لیے خوشخبری بس یہ ایک چٹکی کھائیں اور

مسلمان اللہ عزوجل کا عاجز بندہ اور اس کے احکام کا پابند ہوتا ہے ، بیٹاملے یا بیٹی، یا بے اولاد رہے ہر حال میں اُسے راضی برضا رہنا چاہئے۔قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتا ہے : لِلہِ مُلْکُ السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِ ؕ یَخْلُقُ مَا یَشَآءُ ؕیَہَبُ لِمَنْ یَّشَآءُ اِنٰثًا وَّ یَہَبُ لِمَنۡ یَّشَآءُ الذُّکُوۡرَ ﴿ۙ۴۹﴾ اَوْ یُزَوِّجُہُمْ ذُکْرَانًا وَّ اِنٰثًا ۚ وَ یَجْعَلُ مَنۡ یَّشَآءُ عَقِیۡمًا ؕ اِنَّہٗ عَلِیۡمٌ قَدِیۡرٌ﴿۵۰﴾ ترجمہ کنزالایمان:اللہ ہی کے لئے ہے مزید جاننے کے لیے نیچے ویڈیو پر کلک کریں


جو چاہے ،جسے چاہے بیٹیاں عطا فرمائے اور جسے چاہے بیٹے دے یا دونوں ملا دے بیٹے اور بیٹیاں اور جسے چاہے بانجھ کردے، (یعنی اولاد ہی نہ دے) بیشک وہ علم و قدرت والا ہے۔ (پارہ25سورۃ الشورٰی، آیت:49، 50) انبیاء علیہم السلام میں بھی یہ سب صورتیں پائی جاتی ہیں ۔حضرت لوط و حضرت شعیب علیہما السلام کی صرف بیٹیاں تھیں ، کوئی بیٹا نہ تھا اور حضرت ابراہیم علیہ الصلاۃ والسلام کے صرف فرزند(یعنی بیٹے) تھے ،کوئی دُختر (یعنی بیٹی ) ہوئی ہی نہیں اور سید انبیاء حبیب خدامحمد مصطفٰے صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہ وسلم کو اللہ تعالیٰ نے چار فرزندعطا فرمائے اور چار صاحب زادیاں۔)نیک بیٹے کی خواہش انبیاء کرام کی سنت ہے: بیٹیوں سے نفرت نہ رکھنے اور اللہ تعالیٰ کی رضا پر راضی رہنے والے مسلمان کا بیٹے کی ولادت کی خواہش کرنااور اس کے لئے دعائیں مانگنا نیز اَوراد و وظائف،تعویذ ات وغیرہ کا استعمال کرنا بلا شبہ جائز ہےبلکہ حافظ ، قاری،عالم، مفتی وغیرہ بنانے جیسی اچھی اچھی نیتیں ہوں تو کارثواب بھی ہے۔حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی والدہ محترمہ بی بی مریم رضی اللہ عنہا کی جب ولادت ہوئی تو آپ حضرت زکریا علیہ السلام کی کفالت میں آئیں۔جب کبھی زکریا علیہ السلام آپ کی نماز پڑھنے کی جگہ جاتے تووہاں بے موسمی پھل پاتے۔ایک مرتبہ حضرت زکریا علیہ السلامنے پوچھا اے مریم! یہ پھل تمہارے پاس کہاں سے آتے ہیں؟ انہوں نے جواب دیا: یہ اللہ کی طرف سے ہیں بیشک اللہ جسے چاہتا ہے بے شمار رزق عطا فرماتا ہے۔حضرت زکریا علیہ السلام نے جب یہ سُنا تودل میں خیال پیدا ہوا کہ جو پاک ذات حضرت مریم کو بے وقت بے موسم اور بغیرظاہری سبب کے پھل عطا فرمانے پر قادر ہے بے شک وہ اس پر بھی قادر ہے کہ میری بانجھ بیوی کو نئی تندرستی دیدے اور مجھے اس بڑھاپے